Can purity be obtained from matti? Purity issues

0
282
Can purity be obtained from matti? Purity issues
https://www.google.com/

نماز اسلام کا دوسرا رکن ہے،اور یہ بےغیرطہارت کے صحیح نہ ہوگی – طہارت مٹی اور پانی سے حاصل ہو سکتی ہے ،

 Pani ki qismen

)پاک پانی :وہ پانی جو خود بھی پاک ہو اور دوسروں کو بھی پاک کرنے کی صلاحیت رکھتا ہو ،وہ پانی جو حدث اور ناپاکی کو دور کرے اورگندگی اور نجاست کو ختم کرے-
2  )ناپاک پانی ،وہ پانی جس میں تھوڑی مقدار میں کوئی ناپاکی گر جائے خواہ اسکی مقدار زیادہ ہو لیکن گندگی پڑنے کی وجہ سے اس کا رنگ بو مزہ سب تبدیل ہوجائے —
برتنوں کے احکام
:سونے اور چاندی کے برتنوں کے سوا ہر قسم کے پاک برتن رکھنا اور استعمال کرنا جائز ہے –
سونے اور چاندی کے برتن سے پاکی حاصل تو ہوجائے گی لیکن سونے اور چاندی کے برتن استعمال کرنا حرام ہے —
مردار کا چمڑا :مردار دو قسم کے ہیں :
1)ایسے جانور جن کا گوشت قطعا حرام ہے
2)ایسے جانور کا گوشت جن کا گوشت کھایا جاتا ہے -,, وہ جانور جس کا گوشت کھایا جاتا ہے
اگر مردے کے چمڑے کو دباغت دے دی جائے تو خشک اشیاء کے لئے اس کا استعمال جائز ہے –
استنجا : آگے اور پیچھے کے راستے سے نکلنے والی گندگی صاف کرنے کو استنجا کہتے ہیں
اگر یہ صفائی  پانی سے ہو تو اسکو استنجا کہتے ہیں اور اگر مٹی اور کاغذ وغیرہ سے صاف ہو تو اسے استجمار کہتے ہیں –
فقط استجمار کے لئے یہ شرط ہے کہ وہ چیز  پتھر وکاغذ وغیرہ پاک ہو ،حلال ہو ،اور صاف کرنے کی صلاحیت رکھتی ہو –

Miswaak

کسی نرم لکڑی جیسے پیلو کی لکڑی سے مسواک کرنا سنت ہے –
مسواک کرنے اور پاکی حاصل کرنے میں دائیں جانب سے ابتداءکی جائے اور کسی بھی غیر مرغوب چیز کو زائل کرنے کے لئے بائیں ہاتھ کا استعمال کیا جائے –
وضو کا بیان :وضو کے ارکان :
1)چہرہ دھونا ،کلی کرنا اور ناک میں پانی ڈالنا بھی اس میں شامل ہے –
2)دونوں ہاتھوں کی انگلیوں کے سرے سے لے کر کہنیوں تک دھونا
3)دونوں کانوں سمیت پورے سر کا مسح کرنا –
4)ٹخنوں سمیت دونوں پیر دھونا –
5)ان کاموں میں ترتیب کو برقرار رکھنا –
6)اعضاء کو پے درپے دھنا-

Wazu ke wazibaat

1) وضو کرنے سے پہلے بسم اللہ کہنا
2)رات کی نیند سے بیدار ہو تو پانی میں ہاتھ ڈالنے سے پہلے انہیں تین بار دھونا –
وضو میں مکروہ کام :
1) ٹھنڈے یا گرم پانی سے وضو کرنا
 2)ایک اعضاء کو تین بار سے زیادہ دھونا
3)اعضاء سے پانی کو جھاڑنا ،🔹4)آنکھ کے اندر کے حصے کو دھونا اگرچہ وضو کے بعد اعضاء سے پانی کو صاف کرنا جائز ہے –
موزوں پر مسح کرنا :
چمڑے یا اس طرح کی کسی اور چیز سے بنے ہوئے قدم کے لباس کو خف،یعنی موزہ کہتے ہیں اور اگر یہی اون وغیرہ سے بنا ہوا ہو تو اسے جورب کہتے ہیں – یعنی جراب ،،
موزے پر مسح کے جواز کے لئے کچھ شرطیں ہیں :
1)موزے کو مکمل طہارت کے بعد پہنا گیا ہو ،
2)طہارت پانی سے حاصل کی گئی ہو
3)موزے پاؤں  کے ان حصے کو چھپاتے ہوں جن کا دھونا وضو میں فرض ہے –
4)دونوں موزے جائز ہوں ،،5)دونوں موزے پاک چیز سے بنے ہوں-
مسح کی مدت :مسح کی مدت مقیم کے لئے ایک دن اور ایک رات اور مسافر کے لئے تین دن اور تین رات ہے
وضو کو توڑنے والی چیزیں :
1)پیشاب اور پاخانہ کے راستے سے نکلنے والی چیز خواہ وہ پاک ہو، جیسے ہوا، اور منی یاناپاک ہو جیسے پیشاب پاخانہ مذی —
2)نیند یا بے ہوشی کی وجہ سے عقل کا زائل ہوجانا خواہ وہ ہلکی نیند ہو جو بیٹھ کر یا کھڑے کھڑے ہو
🔹3)پیشاب اور پاخانہ کے علاوہ کسی اور نجس چیز کا زیادہ مقدار میں جسم سے نکلنا جیسے خون
،،5) ہاتھ سے شرمگاہ کو چھونا
،،6)دین سے مرتد ہو جانا
جسے حدث اصغر لاحق ہو یعنی اس کا وضو ٹوٹ گیا ہو تو اس پر یہ چیزیں حرام ہیں
1)قرآن مجید کا چھونا
،2)نماز پڑھنا ،
،3)طواف کرنا —
اور جسے حدث اکبر لاحق ہو یعنی اس پر غسل واجب ہو تو اس پر درج ذیل چیزیں حرام ہیں
1)قرآن پڑھنا
2)مسجد میں ٹھہرنا
نجاست کا دور کرنا :نجاست کی دو قسمیں ہیں
1)عینی: جن کی پاکی ممکن نہ ہو ،جیسے خنزیر اسے جتنا دھویا جائے پاک نہیں ہوگا –
2)کسی ایسی جگہ جو اصلا پاک ہو ،پر پڑنے والی نجاست جیسے کپڑا اور زمین پر پڑنے والی نجاست —

Najis

کتا خنزیر اور ان دونوں سے پیدا ہونے والے جانور اور ہر وہ پرندہ اور چوپایہ جو خلقت میں بلی سے بڑا ہوں
اور ان کا گوشت نہ کھایا جاتا ہوں اس قسم کے تمام حیوانات ان کے تمام اجزاء جیسا کی پیشاب ،لعاب ،پاخانہ،پسینہ ، قے وغیرہ نجس ہیں –

Paak aur saaf

1)انسان کا منی، پسینہ، لعاب، دودھ، بلغم ،عورت کی شرمگاہ کی رطوبت پاک ہے ،البتہ پیشاب، پاخانہ ،مذی ،ودی، اور خون ناپاک ہے-
2)جن جانوروں کا گوشت حلال ہے : ان کے تمام اجزاء پاک ہیں ،،جیسے پیشاب، گوبر، منی، دودھ، پسینہ، ،لعاب، رینٹ، قے ،مذی اور ودی، سب پاک ہیں —
3)جن جانوروں سے بچنا مشکل ہو، جیسے گدھا، بلی، چوہا، وغیرہ – حکم :ان کا صرف پسینہ اور لعاب پاک ہے –
4)مردار :  انسان، مچھلی اور ٹڈی کے سوا ہر جانور کے مردے ناپاک ہیں- اسی طرح ہو وہ جانور جن کا خون نہیں ہوتا ہے ،جیسے بچھو، مکھی اور مچھر ان کے مردے بھی پاک ہیں —
5)جامد چیزیں :حکم: ہر قسم کے جامد ، جیسے زمین اور پتھر پاک ہیں –
آخر میں اللہ تعالی سے دعا ہے کہ ہمیں طہارت کے مسائل سمجھنے کی توفیق دے آمین

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here