Thursday, January 20, 2022
Homeacchi batenJahannam ke hone ki kya daleel hai

Jahannam ke hone ki kya daleel hai

دلیل وزن اعمال کا:

سوال: اس کی کیا دلیل ہے کہ اعمال تولے جائیں گے؟

جواب: اس کی دلیل یہ ہےکہ اللہ تعالیٰ فرماتے ہیں:

,, اور قیامت کے روز ہم میزان عدل قائم کریں گے،،۔( الانبیاء: 68)

اور اس روز( یعنی قیامت کے دن )وزن( اعمال )واقع ہونے والا ہے

پھر جس شخص کا پلہ بھاری ہوگا سو ایسے لوگ کامیاب ہوں گے۔

اور جس شخص کا پلہ ہلکا ہوگا سو یہ وہ لوگ ہوں گے

جنہوں نے اپنا نقصان کرلیا بسبب اس کے کہ ہماری آیتوں کی حق تلفی کرتےتھے۔،،( الاعراف: 8، 9)

اور وہ جو قرآن شریف میں عدم وزن کے بارےمیں:

,, یعنی قیامت کے دن ہم ان کا ذرا بھی وزن قائم نہ کریں گے۔،،( الکہف: 105)

فرمایا گیا کہ وہ کفار کے بارےمیں ہے( یعنی )اس مراد وہ لوگ ہیں

جو اپنے رب کی آیتوں کا یعنی کتاب الٰہیہ کا اور اس سے ملنے کا یعنی قیامت کا انکار کرتے ہیں۔( بیان القرآن )

Jannat ki daleel

سوال: اس کی کیا دلیل ہے کہ جنت پیدا ہوچکی ہے؟

جواب: اللہ تعالیٰ فرماتے ہیں: اور جو شخص اپنے رب کے سامنے کھڑے ہونے سے ڈرتا ہے۔

اس کے لیے دو جنتیں ہوں گی۔( الرحمٰن: 64)

اور ان دونوں جنتوں( یعنی باغوں میں سے کم درجہ دو باغ اور ہیں

یعنی دو جنتیں اور ہیں۔( الرحمٰن: 42)

تحقیق جو لوگ ایمان لائے اور اچھے عمل کئے تو ان کےلئے ایسے باغات ہیں

جن کے نیچے نہریں جاری ہیں۔(البروج: 11)

بیشک پرہیزگار لوگ باغوں( جنتوں )اور چشموں میں ہوں گے۔( الذاریات: 15)

دلیل وجود جنت فی الحال:

سوال: اس کی کیا دلیل ہے کہ جنت فی الحال موجود ہے؟

جواب: اللہ تعالیٰ فرماتے ہیں:

اور اللہ نے ان کےلئے ایسے باغ( یعنی ایسی جنتیں )تیار کئے ہیں جن کے نیچے نہریں جاری ہوں گی

جن میں ہمیشہ رہیں گے۔( التوبہ: 100 )

دلیل ہلاکت زمین و پہاڑ:

سوال: اس کی کیا دلیل ہے کہ زمین اور پہاڑ کو ختم کردیا جائے گا؟

جواب: اللہ تعالیٰ فرماتے ہیں:
اور اس دن کو یاد کرنا چاہیے جس دن ہم پہاڑوں کو ہٹادیں گے

اور آپ زمین کو دیکھیں گے کہ کھلا میدان پڑا ہے اور ہم ان سب کو جمع کردیں گے

اور ان میں سے کسی کو نہ چھوڑیں گے

اور سب کے سب آپ کے رب کے روبرو کھڑے کرکے پیش کئے جائیں گے۔

پھر دونوں ایک ہی دفعہ میں ریزہ ریزہ کردیئے جائیں گے۔( الحاقہ: 16 )

Jahannam ki daleel

سوال: جہنم کے موجود ہونے پر کیا دلیل ہے؟

جواب: اللہ تعالیٰ کا ارشاد ہے:
یہ جہنم ہے جس کا تم سے وعدہ کیا جایا کرتاتھا۔( یس: 43 )

دلیل وجود جہنم فی الحال:

سوال: اس کی کیا دلیل ہے کہ جہنم پیدا ہوچکی ہے؟

جواب: اللہ تعالیٰ فرماتے ہیں:

ہم نے کافروں کی دعوت کےلئے دوزخ کو تیار کررکھاہے۔( الکہف: 102 )

بیشک دوزخ ایک گھات کی جگہ ہے( یعنی عذاب کے فرشتے انتظار اور تاک میں ہیں

کہ کافر آویں تو ان کو پکڑتے ہی عذاب کرنے لگیں اور وہ سرکشوں کا ٹھکانہ ہے۔( النباء: 21,22)

جو لوگ اہل کتاب اور مشرکوں میں سے کافر ہوئے۔

وہ آتش دوزخ میں جاویں گے جہاں ہمیشہ ہمیشہ رہیں گے۔( البینہ: 4)

دلیل دوام عذاب کفار:

سوال: یہ کیسے معلوم ہوا کہ کفار کو ہمیشہ عذاب ہوگا اور کبھی نجات نہ ہوگی؟

جواب: قرآن پاک میں ارشاد ہے:

اور جو لوگ اللہ اور اس کے رسول (ﷺ) کا کہنا نہیں مانتے

یقینًا ان لوگوں کےلئے آتش دوزخ ہے جس میں وہ ہمیشہ رہیں گے۔( الجن: 23 )

بیشک اللہ تعالیٰ نے کافروں رحمت سے دور کر رکھاہے

اور ان کےلئے آتش سوزاں تیار کر رکھی ہے جس میں وہ ہمیشہ رہیں گے۔( الاحزاب: 46، 45 )

بلاشبہ جو لوگ منکر ہیں اور دوسروں کا نقصان کرتے ہیں

تو اللہ تعالیٰ ان کو کبھی نہ بخشیں گے۔

اور نہ ان کو سوائے جہنم کے راہ کے اور کوئی راہ دکھائیں گے

اس پر کہ وہ ہمیشہ ہمیشہ کو رہا کریں گے۔ اور اللہ تعالیٰ کے نزدیک یہ معمولی بات ہے۔
( النساء: 148، 149 )

دلیل علم غیب:

سوال: یہ کیسے معلوم ہوا کہ اللہ تعالیٰ کو علم غیب ہے؟

جواب: اللہ تعالیٰ فرماتے ہیں:

اور آسمانوں اور زمینوں کی پوشیدہ باتیں اللہ ہی کے ساتھ خاص ہیں۔( النحل: 77 )

پوشیدہ باتوں کو سوائے اللہ کے اور کوئی نہیں جانتا

اور تمہارے رب کے لشکروں کو سوائے رب کے اور کوئی نہیں جانتا۔( النمل: 45 )

( یعنی فرشتوں کی تعداد اس کثرت سے ہے کہ اس کو بجز رب کے کوئی نہیں جانتا)( المدثر۔ 31)

https://en.wikipedia.org/wiki/Problem_of_Hell#:~:text=It%20derives%20from%20four%20key,and%20there%20is%20no%20escape.

script async src="https://pagead2.googlesyndication.com/pagead/js/adsbygoogle.js">
RELATED ARTICLES
- Advertisment -

Most Popular

Recent Comments

Translate »